bashri

Meaning of Khatam-ul-nabiyeen

12 posts in this topic

Khatm-e-nabuwat is a hot topic among all muslims today.But many muslim do not know that

WHAT IS THE MEANING OF KHATAM-UL-NABIYYEN.

In Quran the word "Khatam-ul-nabiyeen" has been used at one place,but work "khatam" containg words "kha" +"taa"+"maa" has been used in many verses.In Sura-e-Al-Baqarah, it is used as "Mohar".

Hazrat Wali-ul-Allah Shah Sahib Mohadith Dehelvi Farmate hein:

" Anhazrat SalaAllaho alaihe wasallam per nabi khatam ho gae yani aap ke baad koi aesa sakhs nhen ho sakta jis ko Allah Taala shariyat de ker maboos kare."

(Tafheemat-e-Rabaaniya, tafheem 54)

0

Share this post


Link to post
Share on other sites

Hazrat Ayesha Razi Allah Taala Anha farmati hen:

"Ye to kaho ke Anhazrat SalAllaho alaihe wasallam Khatam-ul-nabiyeen hein magar ye kabhi na kehna ke aap ke baad koi nabi nhen ae ga."

(Musanif ibn-e-abi sheba juz sadis hadith no 219, maktaba darul fikar)

Hazrat Imam Abdul wahab Shairani farmate hein:

"Anhazrat SalAllaho alaihe wasallam ka ye farmana ke "FALA NABIYA BAADI WALA RASOOLA BAADI" is se murad ye hai ke mere baad koi tashreei nabi nhen."

(Al-yawaqeet wa-al-jawahir juz 2, page 324, published in bairoot)

0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[quote name='bashri' timestamp='1288545063' post='85054']
Khatm-e-nabuwat is a hot topic among all muslims today.But many muslim do not know that
WHAT IS THE MEANING OF KHATAM-UL-NABIYYEN.

In Quran the word "Khatam-ul-nabiyeen" has been used at one place,but work "khatam" containg words "kha" +"taa"+"maa" has been used in many verses.In Sura-e-Al-Baqarah, it is used as "Mohar".

Hazrat Wali-ul-Allah Shah Sahib Mohadith Dehelvi Farmate hein:
" Anhazrat SalaAllaho alaihe wasallam per nabi khatam ho gae yani aap ke baad koi aesa sakhs nhen ho sakta jis ko Allah Taala shariyat de ker maboos kare."
(Tafheemat-e-Rabaaniya, tafheem 54)
[/quote]

Why didnt anyone answer this guy? Khatam means final, from the root word "khatm". When they say finalizing Qur'aan they say khatm al qur'aan.

I dont understand the language of the quotes, but thats what it means.

And no its not a "hot topic" its a topic in which theres consensus among Muslims.
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
^ Actually the topic starter [b]bashri[/b] (who is an Ahmedi/Qadiani) has posted in mix Urdu + English. The crux what he says so is:

[quote name='bashri' timestamp='1288545540' post='85055']
Hazrat Ayesha Razi Allah Taala Anha farmati hen:

"Ye to kaho ke Anhazrat SalAllaho alaihe wasallam Khatam-ul-nabiyeen hein magar ye kabhi na kehna ke aap ke baad koi nabi nhen ae ga."
(Musanif ibn-e-abi sheba juz sadis hadith no 219, maktaba darul fikar)[/quote]

[quote name='bashri' timestamp='1288545540' post='85055']
Rough translation: Syeda Ayesha [R.A] said: Say that Prophet Muhammad :[S.A.W.W]: is Khatim-un-Nabiyeen ( [b][size=3]خاتم النبيين[/size][/b] ), [color=#FF0000][b]but don't say that there will be no Prophet after him.[/b][/color] [i][Musanif Ibn Abi Shayba, Vol 6, Hadith 219, Maktaba Darul Fikr][/i][/quote]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[quote name='Jhangvi' timestamp='1316683618' post='100413']
^ Actually the topic starter [b]bashri[/b] (who is an Ahmedi/Qadiani) has posted in mix Urdu + English. The crux what he says so is:

[quote name='bashri' timestamp='1288545540' post='85055']
Hazrat Ayesha Razi Allah Taala Anha farmati hen:

"Ye to kaho ke Anhazrat SalAllaho alaihe wasallam Khatam-ul-nabiyeen hein magar ye kabhi na kehna ke aap ke baad koi nabi nhen ae ga."
(Musanif ibn-e-abi sheba juz sadis hadith no 219, maktaba darul fikar)[/quote]
[quote name='bashri' timestamp='1288545540' post='85055']
Rough translation: Syeda Ayesha [R.A] said: Say that Prophet Muhammad :[S.A.W.W]: is Khatim-un-Nabiyeen ( [b][size="3"]خاتم النبيين[/size][/b] ), [color="#FF0000"][b]but don't say that there will be no Prophet after him.[/b][/color] [i][Musanif Ibn Abi Shayba, Vol 6, Hadith 219, Maktaba Darul Fikr][/i][/quote]
[/quote]
Huh, can somebody check this? I tried to look it up but I have it in pdf with different numbering so I can't do a word search.
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
The quoted narration is found in [i]Musanif Ibn Abi Shayba[/i] as:

[quote][b][size="4"][right]المصنف ابن أبي شيبة » كتاب الأدب » من كره أن يقول لا نبي بعد النبي
ح ٢١٩ - حدثنا حسين بن محمد قال حدثنا جرير بن حازم عن عائشة قالت : قولوا : خاتم النبيين ، ولا تقولوا : لا نبي بعده۔[/right][/size][/b]
Rough translation: Syeda Ayesha [R.A] said: Say that Prophet Muhammad :[S.A.W.W]: is Khatim-un-Nabiyeen ( [b][size="3"]خاتم النبيين[/size][/b] ), but don't say that there will be no Prophet after him.
[center][url="http://islamweb.net/newlibrary/display_book.php?idfrom=3693&idto=3693&bk_no=10&ID=3493"]http://islamweb.net/newlibrary/display_book.php?idfrom=3693&idto=3693&bk_no=10&ID=3493[/url][/center][/quote]
This is narrated by [i]Ibn Abi Shayba[/i] in his [i]Musannaf[/i] with a broken chain between A'isha [R.A] and the narrator that reports it from her, with up to three missing links.

The report that says: "No Prophet will come after me" is mass-transmitted (mutawatir).

Ibn Abi Shayba also narrates with a somewhat weak chain that Mughira ibn Shu`ba [R.A] said:

[quote][b][size="4"][right]حدثنا أبو أسامة عن مجالد قال أخبرنا عامر قال : قال رجل عند المغيرة بن شعبة : صلى الله على محمد خاتم الأنبياء ، لا نبي بعده ، قال المغيرة : حسبك إذا قلت : خاتم الأنبياء ، فإنا كنا نحدث أن عيسى خارج ، فإن هو خرج فقد كان قبله وبعده۔[/right][/size][/b]
Rough Translation: It is enough to say 'Khatam al-Anbiya' ( [b][size="3"]خاتم الأنبياء[/size][/b] ) for it was narrated to us that `Isa [A.S], would come out (come back), so if He comes back, He would be both before and after Him ([S.A.W.W]).[/quote]
So these reports are meant as a reminder that: the descent of `Isa [A.S], at the end of time is established, not that there will be any another Prophet after the Prophet Muhammad :[S.A.W.W]: since `Isa [A.S] will be a follower of the Shari`a and not of his own dispensation nor of the Mosaic Law which He followed in His own time.

:AllahuAalam:

Ref: http://qa.sunnipath.com/issue_view.asp?HD=7&ID=1916&CATE=120
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
Here we have a man of persian descent who is explaining the arabic speaking arabs what khatm (arabic word) means!!!! lol!!!!
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[center][size=5][b]مرزائی امت حضرت صدیقہ کا قول (قولوا انہ خاتم الانبیاء ولا تقولوا لا نبی بعدہ)پیش کرکے آپ کااجرائے نبوت کے عقیدہ کے ساتھ متفق ہونا ثابت کرتے ہیں، ان لوگوں کا اپنے زعم میں یہ بڑا مایہ ناز استدلال ہے اس پر بہت کچھ حاشیہ آرائی کی جاتی ہے۔

[color=#0000cd]واضح ہوکہ کتاب مختلف الحدیث لابن قتیبہ الدینوری صفحہ۲۳۶میں حضرت صدیقہ کے قول ہذا کی توجیہہ بالفاظ ذیل منقول ہے:

واماقول عائشۃ قولوا لرسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم خاتم الانبیاء ولاتقولوالانبی بعدہ فانھا تذہب الی نزول عیسٰی علیہ السلام ولیس ہذا من قولھاناقضا لقول النبی صلی اللہ علیہ وسلم لانبی بعدہ لانہ اراد’’لانبی بعدی‘‘ یمسخ ماجئت بہ کما کانت الانبیاء علیہم السلام تبعث بالنسخ وارادت ہی لا تقولوان المسیح لاینزل بعدہ۔

اس کا مفہوم ہے حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا سے جو یہ مروی ہے کہ آپ نے فرمایاکہ حضورعلیہ السلام کو خاتم النبیین کہو اور یوںنہ کہوکہ آپ علیہ السلام کے بعد کوئی نبی نہیں تو آپ رضی اللہ عنہا کے اس فرمان کا تعلق حضرت عیسیٰ علیہ السلام کے نزول سے ہے اور یہ قول آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی حدیث’’لانبی بعدی‘‘ کے خلاف نہیں ہے کیونکہ آپ علیہ السلام کا مطلب یہ ہے کہ ایساکوئی نبی نہیں آئے گا جو میری شریعت کو منسوخ کردے جیساکہ انبیاء علیہم السلام سابق شرع کو منسوخ کرنے کے لیے مبعوث کیے جاتے تھے، جب کہ حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا کا مطلب یہ ہے تم یہ نہ کہو حضرت مسیح علیہ السلام بھی نہ آئیں گے (بلکہ وہ آئیں گے)[/color]

یہ واضح رہے کہ یہ مذکورہ قول درمنثور ج ۵ ص ۲۰۵ میں تحت آیت خاتم النبیین اور مجمع البحار ج ۵کے تکملہ ص۵۰۲ بلاسند واسناد درج ہے۔قادیانیوں نے مذکورہ قول نقل کرتے وقت اس کو سیاق وسباق سے کاٹ کراپنے مقصد کے موافق الفاظ ذکر کیے ہیں۔ اس کا ماقبل اور مابعد ذکر کرنے میں ان کو خسارہ تھا، اس لیے ترک کر دیا گیا ہے۔اس لیے ہم ذرا تفصیل کے ساتھ تکملہ مجمع البحارکی عبارت مذکورہ کو نقل کرتے ہیں، تاکہ خودصاحب کتاب کی زبان سے مطلب واضح ہو جائے ۔

[color=#0000cd]وفی حدیث عیسٰی انہ یقتل الخنزیر و یکسر الصلیب ویزید فی الحلال ای یزید فی حلال نفسم بان یتزوج ویولد لہ وکان لم یتزوج قبل رفعہ الی السماء فزاد بعد الہبوط فی الحلال فحیئنذ یومن کل احد من اھل الکتاب یتیقن بانہ بشر۔وعن عائشہ قولو انہ خاتم الانبیاء ولاتقولو لانبی بعدہ وہذا ناظراً الی نزول عیسیٰ وہذا ایضاً لا ینافی حدیث لانبی بعدی لانہ اراد لا نبی ینسخ شرعہ۔

(تکملہ مجمع البحار طبع ہند صفحہ۸۵)

یعنی عیسیٰ علیہ السلام نزول کے بعد خنزیر کو قتل کریں گے اور صلیب کو توڑ ڈالیں گے اور حلال چیزوں میں زیادتی کریں گے یعنی نکاح کریں گے اور ان کی اولاد ہوگی، آسمان کی طرف چلے جانے سے پہلے انہوںنے شادی نہیں کی تھی ان کے آسمان سے اترنے کے بعد حلال میں اضافہ ہوا ۔ (بیاہ شادی سے اولاد ہوگی)اس زمانے ہر ایک اہل کتاب ان پر ایمان لائے گا، یقینا یہ بشر ہیں(یعنی خدا نہیں ہیں جب کہ عیسائیوں نے عقیدہ گھڑرکھاہے)اورصدیقہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں حضورصلی اللہ علیہ وسلم کو خاتم النبیین کہو اور یہ نہ کہو کہ آپ کے بعد کوئی نبی آنے والے نہیں،یہ صدیقہ رضی اللہ عنہا کا فرمان(لاتقولوا لا نبی بعدہ)اس بات کے مدنظرمروی ہے۔ کہ عیسیٰ علیہ السلام آسمان سے نازل ہوں گے اور یہ نزول عیسی علیہ السلام حدیث شریف لانبی بعدیکے مخالف نہیں ہے اس لیے کہ حدیث کا مطلب یہ ہے کہ ایسا نبی نہیں آئے گا جو آپ کے دین کا ناسخ ہو(اور عیسیٰ علیہ السلام دین محمدی کی اشاعت اور ترویج کے لیے نازل ہوں گے نہ کہ اس دین کو منسوخ کرنے کے لیے )[/color]

تکملہ مجمع کی تمام عبارت پر نظر کرنے سے صاف ظاہر ہو رہاہے صدیقہ کالانبی بعدہکہنے سے منع فرمانے کا مقصد صرف یہ ہے کہ نزول عیسیٰ علیہ السلام قیامت سے پہلے یقینا ہوگا اور حضورصلی اللہ علیہ وسلم کے بعد کوئی نبی آنے والانہیں کے الفاظ سے ان کے عموم کے اعتبار سے عوام کو شبہ اور وہم کو دور کرنے کے لیے حضرت صدیقہ رضی اللہ عنہا نے بعض اوقات ایساکہنے سے منع فرمایا ہے۔

[color=#ff0000]ثالثاً: حضرت ام المومنین عائشہ صدیقہ امت مسلمہ کے متفقہ عقیدہ کے موافق ختم نبوت کی قائل اور اس اجماعی عقیدہ اور اتفاقی مسئلہ پر خود انہوںنے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے صحیح روایات بیان فرمائی ہیں۔

(۱)پہلی روایت: عن عائشۃ ان النبی صلی اللہ علیہ وسلم قال لایبقی بعدی من النبوۃ شیٔ الاالمبشرات قالوا یارسول اللہ! ماالمبشرات؟ قال :الرویا الصالحۃ یراھا الرجل اوتری لہ۔

(مسند احمد ص۱۲۹ج۶ورواہ البیہقی فی شعب الایمان وکنز العمال بروایۃ خطیب ج۸ص۳۳ )

ترجمہ: حضرت صدیقہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:’’ میرے بعد کچھ بھی نبوت باقی نہیں رہی، ہاں صرف مبشرات باقی رہ گئے ہیں۔ لوگوں نے عرض کیا یارسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم! مبشرات کیاچیز ہیں ؟توآپ نے فرمایا:’’ اچھے خواب ہیں آدمی ان کو خود دیکھتاہے یا اس کے حق میں کوئی دوسرا آدمی ہی دیکھتاہے۔‘‘

(۲)دوسری روایت: عن عائشۃ قالت قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم انا خاتم الانبیاء ومسجدی خاتم مساجد الانبیائ۔

(کنزالعمال بحوالہ الدیلمی وابن النجاروالبزار)

ترجمہ: حضرت صدیقہ رضی اللہ عنہانے فرمایا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:’’ میں تمام نبیوںکو ختم کرنے والا ہوں اور میری مسجد کے بعد کسی دوسری نبی کی مسجد نہیں ہوگی۔‘‘[/color]

ختم نبوت کی ان احادیث کو خود عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہاروایت کرتی ہیں دوسرے صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین کی طرح کسی تاویل وتشریح کے بغیر ذکر کرتی ہیں تو اس کا صاف مقصد یہ ہے حضرت ام المومنین اس مسئلہ پر مہر تصدیق ثبت کررہی ہیں کہ ہر قسم کی نبوت کا دروازہ بند ہوچکاہے تشریعی، مستقل یاغیرمستقل۔[/b][/size][/center]

[center][color=#800000][size=5][b]حضرت ام المومنین کے پیش نظر یہ بات تھی کہ لانبی بعدی کے ظاہر عموم کی وجہ سے عوام نزول عیسی اور اس حدیث کو تضاد نہ سمجھ لیں اس لیے احتیاطا انہوںنے لا نبی بعدہ کہنے سے منع فرمایا۔ا سی قسم کا ایک قول حضرت مغیرہ بن شعبہ سے منقول ہے۔

عن الشعبی قال قال رجل عندہ المغیرۃ بن شعبۃ محمد خاتم الانبیاء لانبی بعد ہ فقال المغیرۃ بن شعبۃ حسبک اذا قلت خاتم الانبیاء فاناکنا نحدث ان عیسی علیہ السلام خارج فان ہوخرج فقد کان قبلہ وبعدہ۔

(تفسیر درمنثورج۵ ص۲۰۴)

ترجمہ: شعبی سے منقول ہے کہ ایک شخص نے حضرت مغیرہ کے سامنے یہ کہا کہ اللہ رحمت نازل کرے محمدصلی اللہ علیہ وسلم پرجو خاتم الانبیاء ہیں اور ان کے بعد کوئی نبی نہیں حضرت مغیرہ نے فرمایا خاتم الانبیاء کہہ دینا کافی ہے یعنی لانبی بعدہکہنے کی ضرورت نہیں کیونکہ ہم کو یہ حدیث پہنچی ہے کہ عیسی علیہ السلام پھر تشریف لائیں گے پس جب وہ آئیں گے تو ایک ان کا آنا محمدصلی اللہ علیہ وسلم سے پہلے ہوا اور ایک آنا حضورصلی اللہ علیہ وسلم کے بعد ہوگا۔[/b][/size][/color]

[size=5][b]پس جس طرح مغیرہ ختم نبوت کے قائل ہیں مگر محض عقیدہ نزول عیسیٰ بن مریم کی حفاظت کے لیے لانبی بعدی کہنے سے منع فرمایااسی طرح حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا نے ختم نبوت کے عقیدے کو تو خاتم النبیین کے لفظ سے ظاہر فرمایا اور اس موہم لفظ کے استعمال سے منع فرمایاکہ جس لفظ سے عیسی علیہ السلام کے نزول کے خلاف کا ابہام ہوتاتھا اور حاشا یہ مطلب ہرگز نہیں کہ حضرت عائشہ صدیقہ حضورصلی اللہ علیہ وسلم کے بعد کسی قسم کی نبوت کو جائزکہتی ہیں۔[/b][/size]

[color=#ff0000][size=7][b]مرزائی مفسر کی شہادت:[/b][/size][/color]

[size=5][b]محمد علی لاہوری اپنے بیان القرآن میں لکھتے ہیں:

اور ایک قول حضرت عائشہ کا پیش کیاجاتاہے جس کی سند کوئی نہیں قولوا خاتم النبیین ولاتقولوالانبی بعدہ خاتم النبین کہو او ریہ نہ کہو کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے بعد کوئی نبی نہیں اور اس کا یہ مطلب لیاجاتا ہے کہ حضرت عائشہ صدیقہ کے نزدیک خاتم النبیین کے معنی کچھ اور تھے اور کاش وہ معنی بھی کہیں مذکور ہوتے۔ حضرت عائشہ کے اپنے قول میں ہوتے، کسی صحابی کے قول میں ہوتے، نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی حدیث میں ہوتے مگروہ معنی در بطن کے قائل ہیں اور اس قدر حدیثوں کی شہادت جن میں خاتم النبیین کے معنی لانبی بعدی کیے گئے ہیں ایک سند قول پر پس پشت پھینکی جاتی ہے یہ غرض پرستی ہے خدا پرستی نہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی تیس حدیثوں کی شہادت ایک بے سند قول کے سامنے رد کی جاتی ہے، اگر اس قول کو صحیح مانا جائے تو کیوں اس کا معنی یہ نہ کیے جائیں کہ حضرت عائشہ کا مطلب یہ تھا کہ دونوں باتیں اکٹھی کہنے کی ضرورت نہیں خاتم النبیین کافی ہے جیساکہ مغیرہ بن شعبہ کا قول ہے کہ ایک شخص نے آپ کے سامنے کہا ’’خاتم الانبیاء ولانبی بعدہ‘‘ توآپ نے فرمایا خاتم الانبیاء تجھے کہنا بس ہے اور یہ بھی ممکن ہے کہ آپ کا مطلب ہوکہ جب اصل الفاظ خاتم النبیین واضح ہیں تو وہی استعمال کرو یعنی الفاظ قرآن کو الفاظ حدیث پر ترجیح دو، اس سے یہ کہاں نکلا کہ آپ الفاظ حدیث کو صحیح نہ سمجھتیں تھیں اور اتنی حدیثوں کے مقابل اگر ایک حدیث ہوتی تو وہ بھی قابل قبول نہ ہوتی چہ جائیکہ صحابہ کا قول ہو۔

(بیان القرآن ج۲ص۱۱۰۳،۱۱۰۴)[/b][/size][/center]

[center][color=#800000][size=5][b]حضرت ام المومنین نے حفظ ماتقدم کاخیال فرماتے ہوئے جو بات فرمائی وہ بہت سے اکابرین نے اپنے اپنے انداز میں لکھی ہے مثلا:[/b][/size][/color]

[color=#0000cd][size=5][b]۱: علامہ زمخشری آیت خاتم النبیین کی تشریح کرتے ہوئے کہتے ہیں(فان قلت)کیف کان آخرالانبیاء وعیسیٰ ینزل فی آخرالزمان(قلت)معنی کونہ آخرالانبیاء انہ الانبیااحد بعدہ وعیسی ممن نبی قبلہ وحین ینزل ینزل عاملا علی شریعۃ محمد مصلیا الی قبلتہ کانہ بعض امتہ۔

(کشاف جلد ۲ص۵۴۲ مطبوعہ مصطفیٰ البابی مصر ۱۳۶۷ھ ۱۹۴۸ئ)

ترجمہ: اگر تو کہے کہ حضرت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کس طرح آخری نبی ہوسکتے ہیں درانحالیکہ عیسی علیہ السلام آخری زمانہ میںنازل ہوں گے۔میں کہتاہوں کہ حضوراکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے آخری نبی ہونے کا معنی یہ ہے کہ ان کے بعد کوئی نیا نبی نہیں بنایاجائے گا اور عیسی علیہ السلام آپ سے پہلے نبی بنائے گئے اور وہ جب نازل ہوں گے تو حضورعلیہ السلام کی شرعیت پر عمل کریں گے، آپ کے قبلہ کی طرف منہ کرکے نماز پڑھیں گے گویا کہ آپ کے امتی ہوں گے۔[/b][/size][/color]

۲[color=#ff0000][size=5][b]: حافظ ابن حزم رحمہ اللہ تحریر فرماتے ہیں :

ھذا مع سماعہم قول اللہ تعالی ولکن رسول اللہ وخاتم النبیین وقول رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم لانبی بعدی فکیف یستجیز مسلم ان یثبت بعدہ علیہ السلام نبیا فی الارض حاشا ما استثناء رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم فی الآثار المسندۃ الثابتۃ فی نزول عیسی ابن مریم علیہ السلام فی آخر الزمان ۔

اللہ تعالیٰ کا فرمان’’ولکن رسول اللہ وخاتم النبیین‘‘اور حضورعلیہ السلام کا ارشاد’’لانبی بعدی‘‘سن کر کوئی مسلمان کیسے جائز سمجھ سکتاہے کہ حضورعلیہ السلام کے بعد زمین میں کسی نبی کی بعثت ثابت کی جائے سوائے نزول عیسی کے آخری زمانہ میں جو رسول اللہ ﷺ کی صحیح احادیث مسندہ سے ثابت ہے۔[/b][/size][/color]

[size=5][b]چند فوائد:

(۱) حضرت عائشہ وحضرت مغیرہ بن شعبہ کی طرف سے لانبی بعدی کے معنی کاانکار نہیں کیا گیا۔ یہ ایک ایسی واضح بات ہے کہ اس کے لیے کسی بحث کی ضرورت نہیں، محدثین سے لانبی بعدی کے ساتھ لا نبوۃ بعدی کے الفاظ روایت صحیح سے ثابت ہیں سو وہ اس کا معنی یہ کرتے ہیںکہ آپ کے بعد کوئی نبی پیدا نہ ہوگا۔فالمعنی انہ لایحدث بعدہ نبی لانہ خاتم النبیین السابقین۔

(مرقات ج۵ص۵۶۴طبع قدیم)

(۲) لانبی بعدیکا مطلب یہ ہے کہ ہر وہ شخص جس پر لفظ نبی بولا جائے اور وہ اس نام سے لوگوں کے سامنے آئے اور اس نام سے اسے ماننا ضروری ہو وہ آپ کے بعد پیدا نہیں ہوسکتا ۔ لا کا لفظ جب نکرہ پر داخل ہو جیسے لا الہ الا اللہ میں تو وہ عموم اور استغراق کا فائدہ دیتا ہے پس حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے بعد کوئی تشریعی یا غیر تشریعی نبی پیدا نہیں ہوسکتا ۔

جب نکرہ نفی کے تحت آئے تو اس میں نفی عام ہوتی ہے لیکن اس عام کا پھیلائو محاورات عرب کے مطابق ہوگا اگر کوئی کسی کو نصیحت کرتے ہوئے کہے کہ یہیں جتنے عمل کرسکتے ہو کر لو موت پر سب عمل ختم ہوجائیں گے اور عربی میں کہتے ہیں لاعمل بعد الموت تو اس میں لا نفی عام کی دلالت یہ ہوگی کہ موت کے بعد کوئی کسی قسم کا عمل نہ ہو سکے گا یہ نہیں کہ پچھلے کیے اعمال بھی سب ختم ہوگئے من یعمل مثقال ذرۃ خیرا یرہپچھلے اعمال سب باقی ہوں گے اور آخرت میں سب سے آگے آئیں گے جس طرح لا عمل بعد الموت میں پچھلے اعمال کی نفی نہیں لانبی بعدی میں پچھلے انبیاء میں کسی کی حیات کی نفی نہیں۔

( عقیدۃ الامۃ فی معنی ختم النبوۃ ص 143مع تغییر یسیر)[/b][/size]

[color=#b22222][size=5][b]لا نبی بعدہ کا صحیح معنی :

لانبی بعدہ میں بعدہ خبر کے مقام پر آیا ہے اور خبر افعال عامہ یا خاصہ میں سے ہے اور محذوف ہے اس کے معنی تین طرح ہوسکتے ہیں

(۱) لانبی مبعوث بعدہ ؛ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے بعد کوئی نبی مبعوث نہیں ہوگا مرقات شرح مشکوۃ میں یہی ترجمہ مراد لیا گیا ہے جو کہ صحیح ہے

(۲) لانبی خارج بعدہ ؛حضورعلیہ السلام کے بعد کسی نبی کا ظہور نہیں ہوگا یہ معنی غلط ہے اس لیے کہ حضرت عیسی علیہ السلام قرب قیامت میں نزول فرمائیںگے حضرت مغیرہ نے انہی معنوں کے اعتبار سے لاتقولوالانبی بعدہ میں ممانعت فرمائی ہے جوسوفیصد ہمارے عقیدہ کے مطابق ہے۔

(۳) لانبی حی بعدہ۔ اس معنی کے اعتبار سے حضرت عائشہ نے لاتقولوالانبی بعدہ میں ممانعت فرمائی ہے اس لیے کہ خود ان سے حضرت عیسیٰ علیہ السلام کے نزول کی روایت منقول ہیں اور ان کے نزدیک حضرت عیسیٰ علیہ السلام ابھی زندہ ہیں جو آسمان سے نزول فرمائیں۔[/b][/size][/color]

[color=#000080][size=5][b]دوالزامی جوابات:

۱: مرزا قادیانی نے لکھاہے’’دوسری کتب حدیث صرف اس صورت میں قبول لائق ہوں گے کہ قرآن اور بخاری اورمسلم کی متفق علیہ حدیث سے مخالف نہ ہوں۔

(آریہ دھرم مندرجہ روحانی خزائن ج۱۰ص۶۰)

جب صحیحین کے مخالف مرزا کے نزدیک کوئی حدیث کی کتاب قابل قبول نہیں تو حضرت عائشہ کی طرف منسوب بے سند قول جو بخاری ومسلم کے علاوہ کتابوں میں ہے کیونکر قابل قبول ہو گا۔

۲: مرزاقادیانی نے لکھاہے:’’آنحضرت نے باربار فرمادیاتھاکہ میرے بعد کوئی نبی نہیں آئے گا اور حدیث لانبی بعدی ایسی مشہور تھی کہ کسی کو اس کی صحت میں کلام نہ تھا۔

(کتاب البرص۱۹۹روحانی خزائن ج۱۳ ص۲۱۷)[/b][/size][/color][/center]

[center][attachment=6331:khatam 1.jpg][/center]
[center][attachment=6332:khatam 2.jpg][/center]
[center][attachment=6333:khatam 3.jpg][/center]
[center][attachment=6334:khatam 4.jpg][/center]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[b] La Nabi ya Baadi [No Prophet after me] [/b]

Answered by Shaykh Gibril F Haddad



[b] Question:[/b]

[b] [size=5]I have read a hadith related to Hazrat Aisha Siddiqa (Razi Allahu Anha) that she said "[color=#ff0000]o people! call The Prophet Muhammad (PBUH) Khatam Al Nabiyin [the seal of the prophets], but do not say that no Prophet will come after him[/color]" (Tafsir Dur-e-Manshoor)[/size][/b]


[b] [size=5]Answer:[/size][/b]

[size=5][img]http://www.sunnipath.com/img/bism01.jpg[/img][/size]

[size=5]Wa `alaykum as-Salam,

This is narrated by Ibn Abi Shayba in his Musannaf with a [u]broken chain between `A'isha and the narrator that reports it from her, with up to three missing links.[/u][/size]
[size=5]The report that says: [u]"No Prophet will come after me" is mass-transmitted (mutawatir).[/u][/size]
[size=5]Ibn Abi Shayba also narrates with a somewhat weak chain that al-Mughira ibn Shu`ba said: "It is enough to say 'Khatam al-Anbiya' for it was narrated to us that `Isa, upon him peace, would come out, so if he comes out, he would be both before and after him."[/size]
[size=5]So these reports are meant as a reminder that the descent of `Isa, upon him peace, at the end of time is established, not that there will be any another Prophet after the Prophet, upon him peace, since `Isa will be a follower of the Shari`a and not of his own dispensation nor of the Mosaic Law which he followed in his own time. And Allah knows best.[/size]
[size=5]Hajj Gibril[/size]

http://spa.qibla.com/issue_view.asp?HD=7&ID=1916&CATE=120
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[size="-1"]Assalamo alaikum[/size]
[size="-1"]Muslims from the time of Holy Prophet Muhammad SAAW till today unanimously believe in the absolute Finality of the Prophethood of Syedna Muhammad SAAW, and the Finality of Holy Quran as the Last message from Allah to guide His creations till the day of Qiyamah. [/size]

[size="-1"]Allah testifies in Quran:[/size][indent] [img]http://alhafeez.org/rashid/khatam2.jpg[/img][/indent][indent] [b][size="-1"]O people ! Muhammad has no sons among ye men, but verily, He is the Apostle of God[/size][/b]
[b][size="-1"]and the Last in the line of Prophets ([color=#ff0000]Khatam-un-Nabiyeen[/color]). And God is Aware of everything."[/size][/b]
[b][size="-1"](Surah Al Ahzab 33.40)[/size][/b][/indent][indent][font=comic sans ms,cursive][color=#0000FF][size=5]Qadianis[b] claim[/b] that they believe that Muhammad is [b]Khatam-un-Nabiyeen خاتم النبيين, [/b]Is this true? Let's find out ![/size][/color][/font][/indent][indent]
This post is a continuation of work being done by [url="http://thecult.info/blog/2009/07/27/mirza-ghulam-the-last-messenger/"]TheCult.info[/url] team on Mirza’s claim of being the last messenger.
[b]Mirza is the REAL Khatam-un-Nabiyyen[/b]
[img]http://thecult.info/blog/wp-content/uploads/2009/07/k11.jpg[/img]

((You should know that Khatamiyyat [finality] was given to Muhammad (SAAW) from the beginning; then it was given to the one [Mirza Ghulam] who was taught by Mohammad’s spirit and made his shadow. Thus blessed is the one who taught and blessed is the one who learned. Therefore [b]the REAL Khatamiyyat was intended for the sixth millennium[/b])) – RK, vol 16, Khutba Ilhamiyya, page 310


[b]Mirza is the Last Messenger[/b]
[img]http://thecult.info/blog/wp-content/uploads/2009/07/k21.jpg[/img]

((Allah wanted to end the matter and to complete the building [of Islam] through the LAST BRICK. Oh you who witness, [b]I am that LAST BRICK[/b])) – RK, vol 16, Khutba-Ilhamiyya, page 178

[img]http://thecult.info/blog/wp-content/uploads/2009/07/k31.jpg[/img]


((In contrary to what some ignorant and sinner people think, you must know that the Promised Messiah who is mentioned in the book of Allah [Quran] is NOT Isa ibn Maryam of the bible who had served the religion of Mousa; BUT the Promised Messiah is the [b]last Khalifa[/b] from this Ummah [b]similar[/b] to Isa who was also – for Mousa’s chain – [b]the last brick and Khatam-ul-Mursaleen[/b] [last prophet] )) – RK, vol 16, Khutba-Ilhamiyya, page 309


[img]http://thecult.info/blog/wp-content/uploads/2009/07/k41.jpg[/img]


((I have been sent [b]at the end of Muhammad’s chain[/b], exactly like the Messiah who had been also sent at the end of Mousa’s chain, so [b]the two chains became identical[/b])) – RK, vol 16, Khutba-Ilhamiyya, page 124





[img]http://thecult.info/blog/wp-content/uploads/2009/07/k51.jpg[/img]

((I have been given the name of Isa the Messiah because the Khilafat of the best messenger [Muhammad] has been [b]ended by me[/b], similar to Isa who ended the Khilafat of Mousa)) – RK, vol 16, Khutba-Ilhamiyya, page 324



[img]http://thecult.info/blog/wp-content/uploads/2009/07/k61.jpg[/img]



((The chain of our prophet [Muhammad] had started with a prophet [Muhammad “saaw”] who was like Mousa, and [b]ended with the one who is similar to Isa[/b] in order to fulfill the promise of Allah. This is a sign for those who ponder. It was mandatory to make the two chains equal: their beginnings are the same, and [b]their ends are the same[/b])) – RK, vol 16, Khutba-Ilhamiyya, page 329



[img]http://thecult.info/blog/wp-content/uploads/2009/07/k71.jpg[/img]


((How could both chains [Muhammad’s chain and Mousa’s chain] be similar to each other without sending a Messiah like that Messiah of Mousa’s chain [b][u]at the END of the chain of the holy prophet[/u][/b] [Muhammad SAAW] )) – RK, vol 18, Ijaz-ul-Masih, page 189


[img]http://thecult.info/blog/wp-content/uploads/2009/07/k81.jpg[/img]


((It was mandatory that Muhammad’s chain should be [b]ended by a Khalifa like Isa[/b] who ended Mousa’s chain, so this chain [Muhammad’s chain] becomes [b][u]identical[/u][/b] to the first chain [Mousa’s chain] )) – RK, vol 16, Khutba Ilhamiyya, page 92

[b][color=#ff0000]Conclusion[/color][/b]:
They believe Mirza is the REAL Khatam! Was the first Khatam fake! Astaghfirullah![/indent]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
this is good idea
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
I always thought Khatham mean end, final and now I have come to learn Ahmadis think Khatam means seal. I asked an arab friend and she agreed with me that Khatam means final so if they r saying it doesn't hence going agaist Quran isn't that Kuffar?
0

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now