kalaam

شیعی دھرم اپنے کتب کی تاریکیوں میں ۔ سکین ورژن

117 posts in this topic

اگر محمد راشد بھائ اجازت دیں تو اس تھریڈ کو اس تھریڈ میں ملا لیتے ہیں

http://islamic-forum...showtopic=13293

why not brother yeh to or acha hoga

ama rashid miya,, apne to humare padhte padhte ankhe hi lal krwa de.. or kitne scan daloge, sara kota ek din me hi pura kr doge kya?? :unsure:

rashid bhai apko ek suggestion dena he: apke pass lagta he bohot maal he shiao k khilaf to kyun na isko is thread me dala kre http://islamic-forum...hp?showforum=97 ??

or thoda kuch apni taraf se bhi likh dia kre,, taki or logo bhi or zada maza aay :cool:.. kya kehte ho??

0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[right][size="5"]بد زبان شیعہ ملا مجلسی ائمہ اربعہ کے بارے میں بکواس کرتے ہوئے لکھتا ہے۔ [/size][/right]

[center][img]http://shiacult.files.wordpress.com/2011/07/4imams-majlisi-01.png[/img][/center]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[center][img]http://shiacult.files.wordpress.com/2011/07/adam-tarikhislam-01.png[/img][/center]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[size="5"][right][b]ابن بابويه و صفار و ديگران بسندهاى معتبر از حضرت صادق عليه السلام روايت كرده‏اند كه حق تعالى حضرت رسول را صد و بيست و چهار مرتبه بآسمان برد و در هر مرتبه آن حضرت را در باب ولايت و امامت امير المومنين عليه السلام و ساير ايمه طاهرين (ع) زياده از ساير فرايض تاكيد و مبالغه كرد[/b]

ابن بابویہ ، صفاء اور دوسرے محدثین نے بسند ہائے معتبر حضرت صادق ﴿ع﴾ سے روایت کی ہے کہ خداوند تعالٰی آنحضرت ﴿ص﴾ کو ایک سو چوبیس ١۲۴ مرتبہ آسمان پر لے گیا اور ہر مرتبہ امیر المومنین ﴿ع﴾ اور تمام آئمہ طاہرین ﴿ع﴾ کی ولایت و محبت کی تمام فرائض سے زیادہ تاکید کی۔

[url="http://www.majlesi.net/elements/dlibrary/?part=ready&action=study&pagenum=34&id=2439"]حق اليقين، ص: 30[/url][/right][/size]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[quote name='mohammadhasan' timestamp='1311336764' post='94523']
ye fake pages hn is k real pages mere pass hn[/quote]
[right][font=jameel noori nastaleeq,arial][size=5]یہ صفحات (حوالے) ، شیعہ کتاب "من لا یحضرہ الفقیہ" کے ھیں ، جو آپ کے مذھب کی "اصول اربعہ" کتابوں میں سے ایک ھے۔ یہ کتاب آپ کو آپ کی ہر دل عزیز شیعہ ویب سائٹ "شیعہ ملٹی ?میڈیا" پر مل جائے گی ، ڈاونلوڈ کر لیں اور ان صفحات کو اپنی آنکھوں سے دیکھ لیں۔ اردو ترجمہ والی ھے ، آپ کو سمجھ آ جائے گی۔ ڈاونلوڈ لنک یہ ھے۔[/size][/font][/right]

[center][url="http://www.shiamultimedia.com/urdubooks3.html"]Man la Yazhar-ul- Faqih - Volume I[/url][/center]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[quote name='mohammadhasan' timestamp='1311411037' post='94576']
rashid sahab jhot bolna aur us pe hansna to koi aap se sikhe aap ne jo refernce diya us pe to kuch aur hi likha hai agr aap sache ho to is ka rivayat number kyu kha gae??????
ye dekho jo reference aap ne diya hai faru e kafi ka us pe to ye hai?
http://www.imageporter.com/axc19jasihdm/ScreenShot001.bmp.html[/quote]
[size="5"][right]آپ کو ہم نے تین دن کا بین تجویز کیا ہے۔ ان تین دن تک آپ شیعہ کتب سے واقفیت حاصل کر لیجئیے۔ فروع کافی اور من لا یحضرہ الفقیہ دو الگ کتابیں ہیں۔ آپ ان تین دن میں شیعہ کتب کا اچھی طرح سے مطالعہ کر لیجئیے۔ [/right][/size]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[img]http://shiacult.files.wordpress.com/2011/07/yaqub-aqeel-ilal-saduq-1.png[/img] Edited by kalaam
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[font="Book Antiqua"][size="3"]I have deleted all the ir-relevent posts from this thread, including mine. This is a valuable thread and should only be kept for knowledge..... Thread is clear now alhamdulilah... Also if you allow, may i move it it in shia scans section in misc category?
[/size][/font]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[center][img]http://www.du3at.com/du3at11/alrafedhah/gheebah.jpg[/img][/center]
[size="5"][center]ائمہ میں سے جو کسی ایک کا انکار کر دے، تو اس کی غیبت کرنا جائز ہے۔ اس کی کئ وجوہات ہیں۔ پہلی وجہ ؛ مخالفین ﴿یعنی سنیوں﴾ پر لعن طعن کرنا، ان سے برات کا اظہار کرنا، ان پر کثرت سے سب و شتم کرنا، ان پر تہمتیں باندھنا، اور ان کی غیبت کرنا روایات سے ثابت ہے کیونکہ وہ اہل البدع والریب میں سے ہیں۔ بلکہ ان کے کفر میں کوئ شک و شبہ نہیں۔


[img]http://gift2shias.files.wordpress.com/2011/07/jaiz-kadhib.png[/img]

سید حسین شہرودی فرماتے ہیں

وقد دلّت الرواية الصحيحة على التخصيص فان الافتراء على المبتدع ليس حراماً لمصلحة أهم، فان الشارع يريد ان يبتعد الناس عنه وعن أفكاره المنحرفة بأي صورة ممكنة.


صحیح روایت اس بات پر دلالت کرتی ہیں کہ بدعتیوں پر افتراء باندھنا حرام نہیں ہے کیونکہ اس میں ایک بہت اہم مصلحت ہے۔ کیونکہ شارع یہ چاہتا ہے کہ لوگ اس ﴿بدعتی﴾ سے اور اس کے منحرف افکار سے دور رہیں ، چاہے کسی صورت میں ہو۔



[/center][/size] Edited by kalaam
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[center]
[img]http://shiacult.files.wordpress.com/2011/08/adam-hayat-ul-quloob-1.png[/img]

[img]http://shiacult.files.wordpress.com/2011/08/adam-hayat-ul-quloob-2.png[/img]

[img]http://shiacult.files.wordpress.com/2011/08/adam-hayat-ul-quloob-3.png[/img]

[img]http://shiacult.files.wordpress.com/2011/08/adam-hayat-ul-quloob-4.png[/img]

[img]http://shiacult.files.wordpress.com/2011/08/adam-hayat-ul-quloob-5.png[/img][/center]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[img]http://shiacult.files.wordpress.com/2011/09/shia-ali-fatima-02.png[/img]
[size="5"][right]

در كتاب علل الشرايع و بشاره المصطفى و مناقب به سندهاى معتبر از ابو ذر و ابن عباس روايت كرده‏اند كه: چون جعفر طيار در حبشه بود، براى او كنيزى به هديه فرستادند و قيمت او چهار هزار درهم بود، چون جعفر به مدينه آمد آن كنيزك را براى برادر خود امير المومنين عليه السلام به هديه فرستاد، و آن كنيزك خدمت آن حضرت را مى‏كرد، روزى حضرت فاطمه عليها السلام به خانه در آمد ديد سر على عليه السلام در دامن آن كنيزك است، چون آن حالت را ملاحظه نمود متغير گرديد پرسيد: آيا كارى كردى با او؟ حضرت امير فرمودند: نه به خدا سوگند اى دختر محمد كارى نكردم، الحال آنچه مى‏خواهى بگو تا بجا آورم. گفت: مى‏خواهم مرا رخصت دهى كه به خانه پدرم روم، حضرت امير فرمود : رخصت دادم، پس فاطمه چادر بر سر كرد و برقع افكند و متوجه خانه پدر بزرگوار خود گرديد. پيش از آنكه فاطمه به خدمت حضرت برسد، جبرييل از جانب خداوند جليل بر او نازل شد و گفت: حق تعالى تو را سلام مى‏رساند و مى‏فرمايد: اينك فاطمه به نزد تو مى‏آيد براى شكايت على، از او در باب على چيزى قبول مكن. چون فاطمه عليها السلام داخل شد، حضرت رسول صلى الله عليه و آله و سلم فرمود كه: به شكايت على آمده‏اى؟ گفت: بلى به رب كعبه، پس فرمود: برگرد بسوى على و بگو: به رغم انف خود راضيم به آنچه كنى، پس برگشت به خدمت على عليه السلام و سه مرتبه گفت: به رغم انف خود راضيم به آنچه رضاى تو در آن است

[font="jameel noori nastaleeq"]علل الشرائع اوربشارہ مصطفٰی اور مناقب میں حضرت ابو ذر اور حضرت ابن عباس سے بسند معتبر مروی ہے کہ جب جعفر طیار حبشہ میں تھے، وہاں ان کو ایک کنیز ھدیہ میں دی گئ جس کی قیمت چار ہزار درہم تھی۔ جب جعفر مدینہ واپس آئے تو انہوں نے وہ کنیز علی بن ابی طالب کو ہدیہ کر دیاکہ خدمت کرے گی۔ ایک دن حضرت فاطمہ آئیں تو دیکھا کہ اس کی گود میں حضرت علی کا سر ہے۔ جب آپ نے یہ دیکھا تو رنجیدہ ہوئیں اور کہا اے ابو الحسن آپ نے اس سے کچھ کیا؟ انہوں نے کہا کہ اے بنت محمد۔ خدا کی قسم کچھ بھی نہیں کیا تم کیا چاہتی ہو؟ انہوں نے کہا کہ مجھے اجازت دیں کہ میں اپنے باپ کے گھر جاؤں۔ آپ نے کہا جاؤ۔ میری طرف سے اجازت ہے۔ حضرت فاطمہ نے اپنی چادر سر پر ڈالی اور برقعہ پہنا اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف چلیں۔ ادھر حضرت جبرئیل نازل ہوئے اور کہا کہ اللہ تعالٰی آپ کو سلام کہتا ہے اور آپ سے یہ کہتا ہے کہ فاطمہ آپ کے پاس علی کی شکایت لے کر آ رہی ہیں۔ آپ علی کے متعلق ان کی کوئ شکایت تسلیم نہ کریں۔ اتنے میں حضرت فاطمہ پہنچ گئیں۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ تم علی کی شکایت لے کر میرے پاس آئ ہو؟ انہوں نے کہا ہاں رب کعبہ کی قسم۔ آپ نے فرمایا واپس جاؤ اور ان سے کہو کہ آپ کی خوشی کے لئے مجھے یہ ننگ و عار قبول ہے۔ پس حضرت فاطمہ واپس آئیں اورتین بار کہا کہ اے ابو الحسن آپ کی خوشی کے لئے مجھے یہ ننگ و عار قبول ہے۔ [/font]

جلاء العیون ، ص ۲۳۰، فصل ششم
[/right][/size]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[center][img]http://shiacult.files.wordpress.com/2011/10/majlisi-murtad-01.jpg[/img][/center]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[center][img]http://hcyfiles.files.wordpress.com/2011/10/toheen-sahaba-abu-ubaida-01.jpg[/img][/center]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[center][img]http://hcyfiles.files.wordpress.com/2011/10/shia-imam-01.jpg[/img][/center]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now