Sign in to follow this  
Followers 0
kalaam

Sahabah aur Mazhab Shia - صحابہ کرام اور مذہب روافض

5 posts in this topic

سورہ قصص آیت ۵ تا ٦

چنانچہ ﴿اللہ تعالی﴾ فرماتا ہے: ونر‌يد أن نمن ... الخ

پھر فرماتا ہے: ونر‌ي فر‌عون وهامان وجنودهما

یعنی ابوبکر و عمر اور ان دونوں کے ساتھی جنہوں نے اتفاق کرکے آل محمد کا حق غصب کر لیا۔

آگے فرماتا ہے: منهم ما كانوا يحذر‌ون

اسکا یہ مطلب ہے کہ ابوبکر و عمر اور ان کے ساتھیوں کو آل محمد سے جن جن باتوں کا اندیشہ تھا یعنی قتل کا اور عذاب کا۔ خداتعالٰی وعدہ فرماتا ہے کہ وہ ہم آل محمد کے ہی ہاتھوں دکھلا دینگے۔

صاحب تفسیر قمی فرماتے ہیں کہ اگر یہ آیت حضرت موسٰی اور فرعون ملعون کے بارے میں نازل ہوئی ہوتی تو خدا تعالٰی یوں فرماتا: ونر‌ي فر‌عون وهامان وجنودهما منه ما كانوا يحذر‌ون

اور منهم نہ فرماتا اس لیے کہ اس فرعون و ہامان اور ان دونوں کے ساتھیوں کو جو بھی اندیشہ تھا، شخص واحد سے تھا۔ یعنی موسٰی سے نہ کہ کل قوم بنی اسرائیل سے۔

ترجمہ مقبول، سورہ قصص، ص ٦١۴

tarjuma-maqbool-02.jpg

0

Share this post


Link to post
Share on other sites

Astaghfirullah Taubaa.. Jhooton per Allah ki laanat

0

Share this post


Link to post
Share on other sites

ummulmomineen-irfan-01.png

0

Share this post


Link to post
Share on other sites

بھائی کتنی عجیب بات ہے کہ یہ حضرت انس بن مالک رضی اللہ کو جہوٹا کہتے ہیں اور ادہر امام حسین اپنی بات کی تصدیق کے لئے انس کا نام لیتے ہیں

مقتل حسین

2.GIF

0

Share this post


Link to post
Share on other sites

hayat-ul-quloob-01.jpg

0

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now
Sign in to follow this  
Followers 0