kalaam

شیعہ اور تحریف قرآن

26 posts in this topic

[center]

[img]http://kr-hcy.com/references/shia/x-021a.jpg[/img]
[img]http://kr-hcy.com/references/shia/014.jpg[/img]

[img]http://hcyfiles.files.wordpress.com/2011/12/tahreef-tarjuma-maqbool-05.jpg[/img][/center] Edited by kalaam
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[img]http://hcyfiles.files.wordpress.com/2012/03/tahreef-maqbool-07a.jpg[/img]

[size="4"][right]چونکہ سورہ آل عمران میں آیت مباہلہ میں پروردگار عالم نے علی مرتضی کو نفس رسول قرار دیا ہے اس فضیلت خاص کے درجے کو کم کرنے کے لئے اعراب لگانیوالے نے یہاں بھی معنی کو زیر و زبر کر دیا۔

ترجمہ مقبول ، سورہ توبہ ، ص ۳۲۹[/right][/size]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[img]http://hcyfiles.files.wordpress.com/2012/03/tahreef-maqbool-08a.jpg[/img]
[size="4"][right]
لقد تاب الله على النبي والمهاجرين والانصار

احتجاج طبرسی میں منقول ہے کہ جناب امام جعفر صادق اور مجمع البیان میں ہے کہ امام رضا اس آیت کو یوں پڑھا کرتے تھے لقد تاب الله بالنبي على المهاجرين والأنصار

تفسیر قمی میں جناب جعفر صادق علیہ السلام سے منقول ہے کہ اسی شان سے یہ آیت نازل ہوئی ہے۔ احتجاج میں ابان ابن تغلب سے منقول ہے کہ میں نے عرض کی یابن رسول اللہ ۔ عوام الناس تو اسطرح نہیں پڑھتے جیسے کہ آپ کے پاس ہے۔ دریافت فرمایا کہ اے ابن ابان وہ کیونکر پڑھتے ہیں۔ وہ کہتے ہیں کہ میں نے عرض کی کہ وہ یوں پڑھتے ہیں۔
لقد تاب الله على النبي والمهاجرين والانصار
فرمایا ویل ہو انکے لئے نبی ﴿ص﴾ کا کونسا گناہ تھا جسکے بارے میں خدا نے انکی توبہ قبول کر لی۔ سوائے اس کے نہیں ہے کہ توبہ تو انکی امت کے لئے قبول کر لی گئ۔

ترجمہ مقبول، پارہ ١١ ، سورہ توبہ، ص ۳۲٦[/right][/size]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[right][size="5"]شیعوں کی تحریف شدہ سورہ فاتحہ ، سورہ ولایہ ، سورہ نورین ، اور آیة الکرسی[/size][/right]

[img]http://shiacult.files.wordpress.com/2011/07/fatiha-majlisi-01.jpg[/img]
[img]http://shiacult.files.wordpress.com/2011/07/ayatulkursi-wilayah-majlisi-01.jpg[/img]
[img]http://shiacult.files.wordpress.com/2011/07/nurayn-majlisi-01.png[/img]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[size="4"][right]نعمت اللہ الجزائری اپنی کتاب میں فرماتے ہیں کہ بہت سی روایات ، جو تواتر کی حد کو پہنچتی ہیں، اس بات پر دلیل ہیں کہ موجودہ قرآن میں تحریف ہو چکی ہیں اور اگرچہ مرتضٰی ، صدوق اور شیخ الطبرسی نے اس کے خلاف بیان کیا ہے اور ان کا کہنا ہے کہ قرآن میں تحریف نہیں ہوئ۔ پھرفرماتے ہیں کہ ان کا یہ قول بہت سے مصالحت کی بناء پر ہے اور ان میں سے ایک یہ ہے کہ وہ اپنے پر طعن کا دروازہ بند کردیں۔ مزید فرماتے ہیں کہ آئمہ سے روایت کی گئ ہے کہ انہوں نے اپنے شیعوں کو حکم دیا کہ وہ نماز وغیرہ میں موجودہ قرآن کی تلاوت کریں اور اس کے مطابق اعمال کریں یہاں تک کہ بارہواں امام یعنی صاحب الزمان ظہور پذیر ہو جائے۔ پھر وہ اس قرآن کو لوگوں کے ہاتھوں سے لیکر آسمان لے جائیں گے اور وہ قرآن نکال لائیں گے جو امیر المومنین ﴿حضرت علی﴾ نے تالیف کیا پھر اس کے بعد اس کو پڑھا جائے گا اور اس پر عمل کیا جائے گا۔[/right][/size]

[img]http://www.dd-sunnah.net/uploads/documents/tahreef-18.jpg[/img]
[img]http://www.dd-sunnah.net/uploads/documents/tahreef-19.jpg[/img]
[img]http://www.dd-sunnah.net/uploads/documents/tahreef-20.jpg[/img]
[img]http://www.dd-sunnah.net/uploads/documents/tahreef-21.jpg[/img]
[img]http://www.dd-sunnah.net/uploads/documents/tahreef-22.jpg[/img]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[right][size="4"]شیخ نوری طبرسی اپنی کتاب فصل الخطاب في إثبات تحريف كتاب رب الأرباب میں فرماتے ہیں

الأخبار الواردة في الموارد المخصوصة من القرآن الدالة على تغيير بعض الكلمات والآيات والسور بإحدى الصور المتقدمة وهي كثيرة جدا، حتى قال السيد نعمة الله الجزائري في بعض مؤلفاته كما حكى عنه: أن الأخبار الدالة على ذلك تزيد على ألفي حديث

قرآن کے کلمات، آیات اور سورتوں میں تحریف پر دلالت کرنے والی روایات بہت کثیر تعداد میں ہیں، حتی کہ نعمت اللہ الجزائری نے اپنی کچھ تصنیفات میں لکھا ہے، کہ وہ احادیث جو تحریف قرآن پر دلالت کرتی ہیں، دو ہزار سے زائد ہیں

شیخ نوری طبرسی مزید فرماتے ہیں
بل ادعى تواترها جماعة يأتي ذكرهم في آخر المبحث

بلکہ ایک جماعت نے ان روایات کے متواتر ہونے کا دعوی کیا ہے جیسا کہ بحث کے آخر میں آئے گا۔[/size][/right]
[img]http://www.dhr12.com/img/3/1225465883.jpg[/img]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[right][size="4"]علامہ سید عدنان الشیعی اپنی کتاب مشارق الشموس الدریہ میں فرماتے ہیں

جو قرآن ہمارے پاس ہے ، وہ پورا قرآن نہیں جیسا کہ حضرت محمد ﴿ص﴾ پر نازل ہوا تھا، بلکہ اس میں ایسا بھی ہے جو اس کے خلاف ہے جو اللہ تعالٰی نے نازل فرمایا ، اور اس میں تحریف شدہ اور تغیر شدہ بھی شامل ہے، اور اس میں سے بہت کچھ حذف کیا گیا ہے، جن میں بہت سی جگہوں سے سے علی ﴿ع﴾ کا نام ، اور لفظ آل محمد ﴿ع﴾ اور منافقین کے نام اور اس کے علاوہ ﴿بھی بہت کچھ حذف کیا گیا ہے﴾ اور یہ اس ترتیب سے نہیں جس ترتیب سے یہ اللہ تعالٰی اور اس کے رسول ﴿ص﴾ کے پاس ہے ۔[/size][/right]

[img]http://shiacult.files.wordpress.com/2011/07/mashariq-tahreef-01.png[/img]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[img]http://hcyfiles.files.wordpress.com/2012/03/tahreef-bihar-01.jpg[/img]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[img]http://hcyfiles.files.wordpress.com/2012/03/tahreef-bihar-02.jpg[/img]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[img]http://hcyfiles.files.wordpress.com/2012/03/tahreef-bihar-03.jpg[/img]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[img]http://hcyfiles.files.wordpress.com/2012/03/tahreef-quran-ibnshahr-01.jpg[/img]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[img]http://hcyfiles.files.wordpress.com/2012/03/tahreef-kafi-11.jpg[/img]
[img]http://hcyfiles.files.wordpress.com/2012/03/tahreef-kafi-01.png[/img]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[img]http://hcyfiles.files.wordpress.com/2012/03/tahreef-quran-kafi-12.jpg[/img]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[size="4"][right]شیعہ علامہ میرزا حبیب اللہ الخوئ نے شرح نہج البلاغہ میں بہت سی تحریف زدہ آیتوں کو بیان کیا ہے جن کا نزول ان کے مطابق یوں تھا اور جو موجودہ قرآن میں مختلف ہیں۔ اس کے علاوہ انہوں نے دو سورتوں سورہ الولایہ اور سورہ النورین کا بھی ذکر کیا ہے جو ان کے مطابق قرآن مجید کا حصہ ہیں۔[/right][/size]
[img]http://www.dd-sunnah.net/uploads/documents/tahreef-13.jpg[/img]
[img]http://www.dd-sunnah.net/uploads/documents/tahreef-14.jpg[/img] Edited by kalaam
0

Share this post


Link to post
Share on other sites
[size="5"][right]بقول شیعہ، حضرت علی ﴿رضی اللہ عنہ﴾ نے فرمایا

أنهم أثبتوا في الكتاب ما لم يقله الله ليلبسوا على الخليقة
انہوں نے قرآن میں وہ چیزیں زیادہ کیں جو اللہ تعالٰی نے نہیں فرمائیں تھیں، تاکہ لوگوں کو دھوکہ دے سکیں۔


وليس يسوغ مع عموم التقية التصريح بأسماء المبدلين، ولا الزيادة في آياته على ما أثبتوه من تلقائهم في الكتاب، لما في ذلك من تقوية حجج أهل التعطيل والكفر، والملل المنحرفة عن قبلتنا، وإبطال هذا العلم الظاهر الذي قد استكان له الموافق والمخالف


تقیہ کی ضرورت اس قدر ہے کہ نہ میں ان لوگوں کے نام بتا سکتا ہوں جہنوں نے قرآن میں تحریف کی نہ اس زیادتی کو بتا سکتا ہوں جو انہوں نے قرآن میں اپنی طرف سے بڑھائ جس سے اہل تعطیل و اہل کفر اور مذاہب مخالفین اسلام کی تائید ہوتی ہے اور اس علم ظاہر کا ابطال ہوتا ہے جس کے موافق مخالف سب قائل ہیں۔

والذي بدا في الكتاب من الازراء على النبي صلى الله عليه وآله من فرقة الملحدين

اور قرآن میں جو برائ نبی کریم ﴿ص﴾ کی ہے، وہ فرقہ ملحدین کی افتراء کی ہوئ ہے۔[/right][/size]


[img]http://hcyfiles.files.wordpress.com/2011/10/tahreef-ehtijaj-02.png[/img]
0

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now